nafo
Urdu - اردو
Bildetema
Lexin-Ordbøker på nett
Flerspråkige Verb
Matematikk begreper
Flerspråklige fortellinger
Tospråklig materiell
Tospråklige undervisningsopplegg

کثیر السانی کہانیاں

 Tema Morsmål og Fortellerhuset er svært glade for å kunne presentere fire Hatteselgeren20frste20bildetospråklige fortellinger på våre nettsider:«Ansa og Bansa», «Hatteselgeren», «De ubudne gjestene» og  «Heksa Dhegdheer>

تھیما مادری زبان اور فورتیلیر ہُس ایک ادارہ ہے جہاں کہانی بنائی یا  ڈرامائی طور پر پیش کی جاتی ہے، بڑے خوش ہو کر اطلاع کرتے ہیں کہ انھوں نے ہمارے نیٹ سائڈ کے لئے چار مختلف کثیرالسانی کہانیاں پیش کی ہیں۔ اں کے نام ہیں انسہ اور بنسہ، ٹوپی بیچنے والا، بن بلائے مہمان اور  چڑیل دیگدے۔

      

Hver fortelling fortelles på to språk samtidig, dvs. enten på persisk og norsk, somali og norsk, tamil og norsk eller urdu og norsk. Alle de fire fortellingene formidles på de fire ulike morsmålene sammen med norsk. «Ansa og Bansa» er en fortelling fra Pakistan, «De ubudne gjestene» kommer fra Iran, «Hatteselgeren» kommer fra Sri Lanka og fortellingen om «Heksa Degdeer» har bakgrunn fra Somalia

Kunstneren Svetlana Voronkova har laget illustrasjonenen til fortellingen om Hatteselgeren. Den finnes både som digitale billedbøker med lyd og som egne lydfiler 

ہر کہانی دو زبانوں میں ایک ساتھ سنائی جائے گی ، مطلب یہ ہے کہ اگر کہانی فارسی میں ہے تو اس کہانی کو فارسی اور نارویجین دونوں زبانوں میں سنا یا جائے گا۔ اسی طرح سومالی اور نارویجین ، تامیل اور نارویجین یا اردو اور نارویجین میں بھی سنا یا جائے گا ۔

یہ چاروں کہانیاں چاروں مختلف مادری زبانوں میں نارویجین کے ساتھ بیان کی جائے گی۔

آنسہ اور بنسہ پاکستان کی کہانی ہے۔بن بلائے مہمان ایران کی ،ٹوپی بیچنے والا سری لنکا کی اور چڑیل دیگدے کا پس منظر سومالیا سے ہے۔

مصور سو یتلا نہ وورونکوا نے کہانی " ٹوپی بیچنے والا " کا تصویری خاکہ بنایا ہے۔ یہ  کہانی آپ کو ڈ یجیٹل  تصویری کتاب آواز کے ساتھ اور آواز فائل کے ساتھ ملے گی۔

چاروں مختلف کہانیاں نیچے دیے ہوئے بٹن کو دبا کر سنی جا سکتی ہے۔

 

 

 

 

 

 

 

 

 

nafo logo Innholdsansvarlig: Lene Østli , E-post: Denne e-postadressen er beskyttet mot programmer som samler e-postadresser. Du må aktivere javaskript for å kunne se den.   - www.morsmal.no